اردو | العربیہ | English



اردو | العربیہ | English

یورپی یونین سے انخلا کیلیے برطانیہ کو 31 جنوری تک مہلت مل گئی

سخت سکیورٹی میں افغان صدارتی انتخاب کے لیے ووٹنگ


WhatsApp
68







افغانستان میں امریکہ کی قیادت میں اتحادی افواج کی جانب سے طالبان حکومت کے خاتمے کے بعد سخت سکیورٹی اور عسکریت پسندوں کی جانب سے دھمکیوں کے سائے میں صدارتی انتخاب کا عمل جاری ہے۔

سنیچر کو ہونے والے صدارتی انتخاب میں ووٹنگ کا عمل صبح سات بجے شروع ہوا۔

بی بی سی پشتو کے مطابق صوبے ہرات میں پولنگ سٹیشنز کے باہر ووٹرز کی لمبی قطاریں دیکھنے میں آ رہی ہیں۔

افغان صدر اشرف غنی نے بھی اپنا ووٹ ڈال دیا ہے۔ جبکہ افغانستان کے صوبہ ننگرہار کے گورنر کے دفتر کے مطابق گورنر شاہ محمود نے بھی اپنے حق رائے دہی کا استعمال کر لیا ہے۔

پولنگ مراکز کو نشانہ بنانے کی دھمکی دینے والے طالبان عسکریت پسندوں کا مقابلہ کرنے کے لیے ملک بھر میں افغان سکیورٹی فورسز کے ہزاروں اہلکاروں کو تعینات کیا گیا ہے۔



اس ماہ کے آغاز میں طالبان اور امریکہ کے درمیان ہونے والے امن مذاکرات ختم ہونے کے بعد دو مرتبہ تاخیر کا شکار ہونے والے انتخاب کا انعقاد کیا جا رہا ہے۔

اس انتخاب میں دو مرکزی امیدوار موجودہ افغان صدر اشرف غنی اور افغان چیف ایگزیکٹو عبداللہ عبداللہ ہے۔ دونوں سنہ 2014 سے اقتدار میں شراکت دار ہیں۔

آزاد الیکشن کمیشن کے ترجمان ذبیہ سادات نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ 'پورے ملک میں ووٹنگ کا آغاز ہوچکا ہے اور ہمیں خوشی ہے کہ عوام پہلے ہی پولنگ مراکز میں بڑی تعداد میں اپنے ووٹ کاسٹ کرنے کے منتظر ہیں۔'

صدارتی انتخاب کے امیدوار کون ہیں؟

اس انتخاب میں مرکزی امیدواروں میں افغانستان کے موجودہ صدر اشرف غنی اور چیف ایگزیکٹو عبداللہ عبداللہ ہیں جبکہ سابق جنگجوؤں، سابق جاسوسوں اور ملک کی سابقہ کمیونسٹ حکومت کے ارکان سمیت اٹھارہ افراد نے ابتدا میں ہی الیکشن لڑنے کے لیے سامنے آئے تھے لیکن بعد میں ان میں سے پانچ افراد دستبردار ہوگئے ہیں۔

ایک بھی خاتون صدارتی انتخاب کے لیے امیدوار نہیں ہے اور صرف تین خواتین دیگر عہدوں کے لیے انتخاب لڑتی نظر آتی ہیں۔

یہ الیکشن اہم کیوں ہے؟
افغانستان کا اگلا صدر چار عشروں سے جاری جنگ سے تباہ حال ملک کی قیادت کرے گا۔

اس جنگ میں ہر سال ہزاروں افراد کی ہلاکت کا سلسلہ جاری ہے اور دنیا کے مختلف ممالک کی افواج اس تنازعے کا حصہ ہیں۔


بین الاقوامی برادری کی مداخلت کے قریب قریب دو دہائیوں کے بعد امریکہ نے طالبان کے ساتھ تنازعہ کے خاتمے کے لیے مذاکرات کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

افغانستان میں اس وقت تقریباً 14000 امریکی فوجی جبکہ برطانیہ، جرمنی اور اٹلی جیسے ممالک کے بھی ہزاروں فوجی موجود ہیں۔ جو افغانستان کی سکیورٹی فورسز کی تربیت، مشورے اور مدد کے لیے نیٹو مشن کے ایک حصے کے طور پر کام کر رہی ہیں۔

اس کا مطلب یہ ہے کہ امریکہ کی قیادت میں اتحادی افواج کی جانب سے طالبان حکومت کے خاتمے کے بعد چوتھے افغان صدارتی انتخاب میں جو کوئی بھی صدر منتخب ہوا ہے اسے ملک کی تاریخ کے ایک اہم وقت میں کلیدی کردار ادا کرنا ہوگا۔

تاہم فی الحال طالبان یہ کہتے ہوئے افغان حکومت سے براہ راست بات چیت کرنے سے انکار کرتے ہیں کہ یہ غیر قانونی ہے۔

مزید یہ کہ عسکریت پسند گروہ نے یہ بھی کہا ہے کہ وہ امریکہ کے ساتھ امن معاہدے پر اتفاق رائے کے بعد ہی افغان حکام سے بات چیت کا آغاز کرے گا۔

لہذا افغانستان کی حکومت کا سربراہ کون ہوگا یہ امریکہ کی بنیادی پریشانی نہیں ہوسکتی ہے - لیکن یہ فوج ، طالبان اور دیگر باغیوں کے مابین کراس فائر میں پھنسے لوگوں کے لیے اہمیت رکھتا ہے۔

بی بی سی کی تحقیقات کے مطابق اگست کے مہینے میں افغانستان میں جاری جنگ میں اوسطاً 74 افراد لقمہ اجل بن گئے۔ ہلاک ہونے والوں میں 20 فیصد عام شہری بھی شامل ہیں۔

اقوام متحدہ کے مطابق اس سال کی پہلے چھ ماہ میں افغانستان اور امریکی فوجوں کی ہاتھوں ہلاک ہونے والے سویلین کی تعداد دہشتگردوں کی کارروائی میں ہلاک ہونے والوں سے زیادہ ہیں۔

دیگر مسائل کیا ہے؟
پانچ برس قبل ہونے والے صدارتی انتخاب میں دھوکہ دہی اور ووٹ میں دھاندلی کے الزامات سامنے آئے تھے۔ اور درحقیقت اس انتخاب کے نتائج کا نتیجہ آنے میں مہینوں لگے تھے۔ جس پر امریکہ کی جانب سے دونوں اہم امیدواروں کے مابین مذاکرات کے بعد 'قومی اتحاد حکومت' کے قیام کا معاہدہ ہوا تھا۔

اس مرتبہ بھی معاملات بہتر ہونے کی زیادہ امید نہیں ہے۔

ایک کروڑ سے بھی کم افراد ووٹنگ کے عمل میں حصہ لے رہے ہیں۔

افغانستان کی شفاف الیکشن فاؤنڈیشن کے ایک سروے کے مطابق نصف سے زیادہ آبادی ووٹ ڈالنے کا ارادہ نہیں رکھتی۔

اس کی ایک وجہ طالبان کی طرف سے پرتشدد حملوں کے خطرات ہیں کیونکہ انھوں نے دھمکی دی ہے کہ وہ پولنگ سٹیشن پر حملہ کریں گے اور وہ انتخابی جلسوں کو پہلے ہی نشانہ بنا چکے ہیں۔

ملک کے بہت بڑے علاقے طالبان کے زیر کنٹرول ہیں جہاں افغان حکومت کی رٹ نہ ہونے کے برابر ہے اور وہاں صدارتی انتخاب کے لیے ووٹنگ ہونا ناممکن ہے۔

مگر ووٹرز میں جوش و جذبے کی کمی کا احساس بھی اس وجہ ہے کہ وہ سمجھتے ہیں کہ ملک میں حالات بہتر نہیں ہوسکتے۔ اور اس کی دوسری وجہ یہ بھی ہے کہ اس مرتبہ بھی ملک کی صدارت کے لیے انھیں دو امیدواروں میں مقابلہ ہے جنھوں نے سنہ 2014 کے انتخاب میں ایک دوسرے کے ساتھ اقتدار کے لیے مقابلہ کیا تھا۔


افغان صدر اشرف غنی اور افغانستان کے چیف ایگزیکٹو عبداللہ عبداللہ دونوں پر اقتدار میں رہتے ہوئے کرپشن کے الزامات ہیں۔ جبکہ اقوام متحدہ کے مطابق ملک میں بے روزگاری کا تناسب تقریباً 25 فیصد ہے اور تقریبا 55 فیصد افغان عوام غربت کی لکیر سے نیچے زندگی گزار رہے ہیں۔




















WhatsApp




متعلقہ خبریں
امریکا کا افغانستان میں طالبان کے ٹھکانوں پر فضائی حملہ، ... مزید پڑھیں
شام میں تیل کی حفاظت کے نام پر امریکا ’عالمی ... مزید پڑھیں
داعش سربراہ ابوبکر البغدادی حملے میں ہلاک، امریکی میڈیا کا ... مزید پڑھیں
مسئلہ کشمیر عوامی امنگوں اور بات چیت سے حل کیا ... مزید پڑھیں
نریندرمودی جمہوریت اور معیشت دونوں کو نقصان پہنچا رہے ہیں، ... مزید پڑھیں
ترکی اور روس کی کرد جنگجوؤں کو شامی سرحدی علاقوں ... مزید پڑھیں
برطانیہ میں ٹرک سے 39 لاشیں برآمد، ڈرائیور گرفتار ... مزید پڑھیں
دنیا کی کوئی طاقت چین اور تائیوان کا دوبارہ الحاق ... مزید پڑھیں
ترک فوج اور کردوں کے درمیان جھڑپ میں ترک سپاہی ... مزید پڑھیں
برطانیہ اور یورپی یونین میں بریگزٹ معاہدے پر اتفاق ... مزید پڑھیں
ترکی کا امریکی دھمکیوں کے باوجود شام میں فوجی آپریشن ... مزید پڑھیں
مقبوضہ کشمیر کی صورت حال پر بھارتی سپریم کورٹ مودی ... مزید پڑھیں
جاپان میں سمندری طوفان ’ہگی بس‘ میں ہلاکتوں کی تعداد ... مزید پڑھیں
بھارت میں گیس سیلنڈر دھماکے سے 13 افراد ہلاک ... مزید پڑھیں
سخت سکیورٹی میں افغان صدارتی انتخاب کے لیے ووٹنگ ... مزید پڑھیں
سعودی اور اماراتی وزرائے خارجہ کس مشن پر پاکستان آئے؟ ... مزید پڑھیں
متعلقہ خبریں
یورپی یونین سے انخلا کیلیے برطانیہ کو 31 جنوری تک مہلت مل گئی
امریکا کا افغانستان میں طالبان کے ٹھکانوں پر فضائی حملہ، 80 جنگجو ہلاک
شام میں تیل کی حفاظت کے نام پر امریکا ’عالمی ڈکیتی‘ کر رہا ہے، روس
داعش سربراہ ابوبکر البغدادی حملے میں ہلاک، امریکی میڈیا کا دعویٰ
مسئلہ کشمیر عوامی امنگوں اور بات چیت سے حل کیا جائے، اقوام متحدہ
نریندرمودی جمہوریت اور معیشت دونوں کو نقصان پہنچا رہے ہیں، امریکی جریدہ
ترکی اور روس کی کرد جنگجوؤں کو شامی سرحدی علاقوں سے نکلنے کیلیے مزید مہلت
برطانیہ میں ٹرک سے 39 لاشیں برآمد، ڈرائیور گرفتار
دنیا کی کوئی طاقت چین اور تائیوان کا دوبارہ الحاق نہیں روک سکتی، چینی وزیردفاع
ترک فوج اور کردوں کے درمیان جھڑپ میں ترک سپاہی جاں بحق

مقبول خبریں
ویڈیو گیلری

آزادی کی تحریکوں کو دبایا تو جا سکتا ہے لیکن ختم نہیں کیا جا سکتا : پاکستانی ہائی کمشنرعبدالباسط

بھارتی اشتعال انگیزی کا ذمہ داری سے جواب دے رہے ہیں ،عاصم باجوہ

پاکستان اورسعودی عرب حقیقی بھائی ہیں،علما اکرام مسلم امت کے اتحاد میں کردار ادا کریں:امام کعبہ

بڈگام میں بھارتی فوج کی فائرنگ، مزید 8 کشمیری شہید، پاکستان کا شدید احتجاج

فرانس میں فائرنگ کرکے 3 افراد کوقتل کرنے والے حملہ آورکی ہلاکت کی تصدیق

سپورٹس
انٹرنیشنل کرکٹ چاہیے بھلے ’بی ٹیم‘ ہی سہی
اکتوبر 1990 میں نیوزی لینڈ کی ٹیم کو پاکستان کے دورے پہ مزید پڑھیں ...
ویب ٹی وی
ٹورازم
پاکستان میں خوبصورت اور دلکش مناظر کی کمی نہیں ہے۔
پاکستان میں خوبصورت اور دلکش مناظر کی کمی نہیں ہے۔ posted by Abdur مزید پڑھیں ...
انٹرٹینمینٹ
وینا اداکاری سے گلوکاری کا سفر
وینا ملک کو زیادہ تر لوگ بطور اداکارہ و ماڈل جانتے ہیں مزید پڑھیں ...
مذہب
بیویاں شوہروں کو طلاق دے سکیں گی والا نکاح نامہ زیرغور نہیں، اسلامی نظریاتی کونسل
اسلام آباد(ویب ڈیسک) اسلامی نظریاتی کونسل کا کہنا ہے کہ مزید پڑھیں ...
بزنس
10 بینکوں کو80 کروڑ روپے سے زائد جرمانہ
10 بینکوں کو80 کروڑ روپے سے زائد جرمانہ، کون کونسے بینک مزید پڑھیں ...