اردو | العربیہ | English



اردو | العربیہ | English

یورپی یونین سے انخلا کیلیے برطانیہ کو 31 جنوری تک مہلت مل گئی

بلوچستان سے خلائی سائینسدان کا ظہور


WhatsApp
65



بلوچستان سے خلائی سائینسدان کا ظہور

بلوچستان سے خلائی سائینسدان کا ظہور
7 ستمبر 2019
تحریر محمد جمیل راہی ایڈووکیٹ
صلاح الدین نامی ایک ذھنی مریض کی اے ٹی ایم مشین توڑنے کے الزام میں پولیس حراست میں ھلاکت کے قصے میڈیا پر گونج رہے ہیں,گذشتہ ماہ ایک ڈکیتی کے دوران ایک نوجوان کی پرائیویٹ افراد کے ہاتھوں تشدد کی وجہ سے موت اورایک پرائیویٹ سکول کےطالبعلم کی استاد کے ہاتھوں عدم ادائیگیئ واجبات اور سبق یاد نہ کرنے پر تشدد کے باعث موت واقع ہونے کی خبر نے اوسان خطا کر رکھے تھے ,قوم کے نوجوانوں کی اسطرح ہلاکتوں نے تشویش کی لہر دوڑا دی کہ قوم کےنوجوانوں کا مستقبل کیا ہو گا ؟ لیکن بلوچستان سے پوری قوم کیلئے باعث افتخار سپوت ﮈﺍﮐﭩﺮ ﯾﺎﺭ ﺟان عبدالصمد کی خلائی سائینسدان بننے کی خبر ٹھنڈی ہوا کا جھونکا لگی.عالمی خبر رساں ادارے بی بی سی پر انکیے بارے چھپنے والی کہانی انہی کی زبانی پڑہ کر ڈھارس بندھی کہ پاکستان کا مستقبل تابناک ہی رہے گا.ان شاءاللہ. ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺻﻮﺑﮧ ﺑﻠﻮﭼﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﭘﺴﻤﺎﻧﺪﮦ ﺿﻠﻊ ﮐﯿﭻ ﮐﮯ ﺩﻭﺭ ﺩﺭﺍﺯ ﮔﺎﺅﮞ ﺑﻠﯿﺪﮦ ﮐﮯ ﺭﮨﺎﺋﺸﯿﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﺳﻮﭼﺎ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﮔﺎ ﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻋﻼﻗﮯ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﻣﺘﻮﺳﻂ ﻃﺒﻘﮯ ﮐﮯ ﺯﻣﯿﻨﺪﺍﺭ ﮐﺎ ﺑﯿﭩﺎ ﺧﻼﺋﯽ ﭨﯿﮑﻨﺎﻟﻮﺟﯽ ﭘﺮ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻥ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﻃﺎﻧﯿﮧ ﮐﯽ ﮐﯿﻤﺒﺮﺝ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﮈﯾﭙﺎﺭﭨﻤﻨﭧ ﮐﺎ ﺳﺐ ﺳﮯ ﮐﻢ ﻋﻤﺮ ﺳﯿﻨﯿﺌﺮ ﺭﯾﺴﺮﭺ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻥ ﺍﻭﺭ ﻓﯿﻠﻮ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﻋﺰﺍﺯ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﮨﮯجو پوری قوم کیلئے باعث افتخار ثابت ہو گا.سب سے پسماندہ خطہ جو اب سی پیک اور گوادر کی عالمی بندرگاہ کے جدید وجود کے ظہور میں آنے کے بعد اہم ترین علاقہ قرار دیا جاتا ہےاسے اب یہ اعزاز بھی مل گیا کہ اسکی کوکھ سے ملک کو نامور خلائی سائینسدان میسر آیا.
بی بی سی کے ﺻﺤﺎﻓﯽ ﻣﺤﻤﺪ ﺯﺑﯿﺮ ﺧﺎﻥ نے جو کہانی سنی انہی کی زبانی بیان کردی جو کچھ یوں ہے,"
ﻣﯿﺮﺍ ﺗﻌﻠﻖ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﮯ ﻋﻼﻗﮯ ﺳﮯ ﮨﮯ ﺟﮩﺎﮞ ﭘﺮ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺭﻭﺍﺝ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ ﺑﻠﮑﮧ ﭘﻮﺭﮮ ﻋﻼﻗﮯ ﻣﯿﮟ ﮔﻨﺘﯽ ﮨﯽ ﮐﮯ ﭼﻨﺪ ﻟﻮﮒ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ ﺟﻮ ﺧﻂ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﭘﮍﮪ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ۔ﻣﯿﺮﮮ ﻭﺍﻟﺪ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﻧﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﺳﮑﻮﻝ ﮐﺎ ﻣﻨﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ، ﻣﮕﺮ ﺑﭽﭙﻦ ﮨﯽ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﮨﻢ ﭘﮍﮪ ﻟﮑﮫ ﺟﺎﺋﯿﮟ۔ ﮨﻢ ﺯﻣﯿﻨﺪﺍﺭ ﺿﺮﻭﺭ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺯﻣﯿﻨﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻓﯽ ﮨﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺯﻣﯿﻨﻮﮞ ﭘﺮ ﻭﮦﭘﯿﺪﻭﺍﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ ﺟﻮ ﮨﻮﻧﯽ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﻣﯿﺮﯼ ﺿﺮﻭﺭﺗﯿﮟ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﯿﺎ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ، ﺑﯿﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺳﮑﺘﺎ۔ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﯾﮧ ﮐﮧ ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﻮ ﺍﻗﺒﺎﻝ ﮐﮯ ﮐﭽﮫ ﺍﺷﻌﺎﺭ ﯾﺎﺩ ﺗﮭﮯ ﺟﻮ ﻭﮦ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﮭﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﮨﺮ ﻭﻗﺖ ﺳﻨﺎﯾﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ ﺟﺲ ﺳﮯ ﮨﻤﺖ ﺑﻨﺪﮪ ﺟﺎﺗﯽ ﺗﮭﯽ۔ﭘﮍﮬﺎﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﯼ ﺩﻟﭽﺴﭙﯽ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﮨﻤﯿﮟ ﺳﺎﺗﮫ ﻟﮯ ﮐﺮ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﮐﮯ ﻋﻼﻗﮯ ﻟﯿﺎﺭﯼ ﭘﮩﻨﭻ ﮔئے.ﺟﺐ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻠﯽ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﯾﻘﯿﻦ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﯾﺴﮯ ﻟﮕﺎ ﮐﮧ ﯾﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﮨﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﻟﻮﮒ، ﮔﺎﮌﯾﺎﮞ، ﭨﺮﯾﻔﮏ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺷﻨﯿﺎﮞ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺣﯿﺮﺕ ﺯﺩﮦ ﺭﮦ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺭﺍﺕ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺟﻠﺘﯽ ﻻﺋﭩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﯾﺴﮯ ﻟﮕﺎ ﮐﮧ ﺟﯿﺴﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﺭﻭﺷﻨﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺷﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻨﭻ ﮔﯿﺎ ﮨﻮﮞ۔ﻟﯿﺎﺭﯼ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺍﺭﺩﻭ ﻣﯿﮉﯾﻢ ﺳﮑﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻠﮧ ﻟﯿﺎ ﻣﮕﺮ ﺟﻠﺪ ﮨﯽ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﺟﺐ ﺗﮏ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﺍﭼﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﮔﯽ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺗﮏ ﺗﺮﻗﯽ ﮐﺮﻧﺎ ﻣﻤﮑﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ۔ﺍﺱ ﺻﻮﺭﺗﺤﺎﻝ ﮐﺎ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻧﮕﻠﺶ ﻣﯿﮉﯾﻢ ﺳﮑﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻠﮧ ﻟﯿﻨﺎ ﮨﮯ، ﺟﺲ ﭘﺮ ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﻠﻔﭩﻦ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﻗﻊ ﺷﮩﺮﺕ ﯾﺎﻓﺘﮧ ﺳﮑﻮﻝ ﻟﮯ ﮔﺌﮯ ﺟﻮ ﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﺳﺘﻄﺎﻋﺖ ﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﺗﮭﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺷﻮﻕ ﮐﯽ ﺧﺎﻃﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﻭﮨﺎﮞ ﭘﮍﮬﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﭨﮭﺎﻥ ﻟﯽ ﺗﮭﯽ۔ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺩﯾﮩﺎﺗﯽ ﺑﭽﮧ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺷﮩﺮﯼ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺗﻮ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎﻧﺘﺎ ﺗﮭﺎ، ﻣﮕﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺎﺱ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﺎ ﺩﯾﺎ ﮨﻮﺍ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﮐﺮ ﮔﺰﺭﻧﮯ ﮐﺎ ﺣﻮﺻﻠﮧ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺱ ﻣﻮﻗﻊ ﭘﺮ ﭘﺮﻧﺴﭙﻞ ﺻﺎﺣﺒﮧ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻓﺘﺮ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﺍ ﺍﻧﭩﺮﻭﯾﻮ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺑﺎﺕ ﭼﯿﺖ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯼ، ﺣﺎﻻﻧﮑﮧ ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﭘﺮﻧﺴﭙﻞ ﮐﻮ ﭘﮩﻠﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﯾﮧ ﯾﮩﺎﮞ ﺩﺍﺧﻠﮧ ﻟﯿﻨﺎ ﮨﯽ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﺑﮩﺘﺮ ﮨﻮﺳﮑﮯ۔ ﺻﻮﺭﺗﺤﺎﻝ ﯾﮧ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﺗﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﺁﺗﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ ﻣﮕﺮ ﺳﻤﺠﮫ ﻟﯿﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﺍ ﻧﺎﻡ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﺟﺲ ﮐﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺭﺩﻭ ﻣﯿﮟ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﮧ ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺯﻣﯿﻨﻮﮞ ﭘﺮ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﭽﮫ ﺍﻭﺭ ﺳﻮﺍﻝ ﭘﻮﭼﮭﮯ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﺳﻤﺠﮫ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ۔ﺷﺎﯾﺪ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﺭﺩﻭ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﺟﻮﺍﺏ ﻧﺎﮔﻮﺍﺭ ﮔﺰﺭﮮ ﺣﺎﻻﻧﮑﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺑﺘﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﺍﺧﻠﮧ ﻣﻞ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﺮﻭﮞ ﮔﺎ۔ ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﮩﺎ ’ ﺑﮩﺘﺮ ﯾﮧ ﮨﻮﮔﺎ ﮐﮧ ﺗﻢ ﮔﺎﺅﮞ ﺟﺎﺅ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺯﻣﯿﻨﻮﮞ ﭘﺮ ﻣﺪﺩ ﮐﺮﻭ۔ ‘ﯾﮧ ﺍﯾﺴﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺗﮭﮯ ﺟﻦ ﮐﻮ ﺳﻦ ﮐﺮ ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﺴﻮ ﺁﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ ﺟﺒﮑﮧ ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﻧﻈﺮﯾﮟ ﭼﺮﺍ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺳﺎﺗﻮﯾﮟ ﮐﻼﺱ ﮐﺎ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻢ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﯿﺮﺍ ﺩﻝ ﭨﻮﭦ ﺳﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﻣﮕﺮ ﻣﯿﺮﯼ ﺗﻮ ﺗﺮﺑﯿﺖ ﮨﯽ ﮐﭽﮫ ﺍﻭﺭ ﻃﺮﺡ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﺗﻮ ﺣﻮﺻﻠﮯ ﺍﻭﺭ ﻋﺰﻡ ﮐﺎ ﺳﺒﻖ ﺳﮑﮭﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺗﻮ ﺫﮨﻦ ﻧﺸﯿﻦ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﺳﯿﮑﮭﻨﺎ ﻻﺯﻡ ﮨﮯ۔ ﻟﯿﺎﺭﯼ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺍﻧﮕﻠﺶ ﻣﯿﮉﯾﻢ ﺳﮑﻮﻝ ﮐﮯ ﺑﯿﻨﺮﺯ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﺳﭩﺮﺯ ﻟﮕﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﺳﮑﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮐﺮﻭﺍ ﺩﯾﮟ۔ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﺳﯿﮑﮭﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺧﻮﺩ ﮨﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮ ﺩﯼ، ﮐﺒﮭﯽ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﺍﺧﺒﺎﺭ ﻣﻞ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﭘﮍﮬﺘﺎ، ﮐﺒﮭﯽ ﮔﺮﺍﻣﺮ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﺘﺎﺏ ﭘﮍﮪ ﻟﯿﺘﺎ۔ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﺳﮑﻮﻝ ﮐﮯ ﺍﺳﺎﺗﺬﮦ ﺳﮯ ﺟﻮ ﻣﺪﺩ ﻣﻞ ﺟﺎﺗﯽ ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮍﮬﺎﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﻟﯿﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﮔﻮ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﺗﮭﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﮐﭽﮫ ﺍﺳﺎﺗﺬﮦ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻣﺤﻨﺖ ﺳﮯ ﭘﮍﮬﺎﯾﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔ﺟﺐ ﻣﯿﭩﺮﮎ ﮐﮯ ﺍﻣﺘﺤﺎﻥ ﺗﮭﮯ ﺗﻮ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﯽ ﻧﻘﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﺗﺮﻏﯿﺐ ﺩﯼ ﻣﮕﺮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﺎ ﭘﮭﻞ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﺎ ﭘﮭﻞ ﺿﺎﺋﻊ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ۔ ﯾﮩﯽ ﻣﯿﺮﯼ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﻧﺼﯿﺤﺖ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﮨﻮﺍ ﺑﮭﯽ ﯾﮩﯽ۔ ﻣﯿﭩﺮﮎ ﮐﺎ ﺟﺐ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﺁﯾﺎ ﺗﻮ ﻣﯿﺮﺍ ﺍﮮ ﻭﻥ ﮔﺮﯾﮉ ﺁﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔ﻣﺴﺎﺋﻞ ﮐﺎ ﺩﻭﺭ ﺧﺘﻢ، ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯿﻮﮞ ﮐﺎ ﺳﻔﺮ ﺷﺮﻭﻉ.ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻣﯿﭩﺮﮎ ﺳﻨﮧ 2003 ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﺒﮑﮧ ﺍﺳﯽ ﺳﺎﻝ ﮐﮯ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﮈﯼ ﺟﯽ ﺳﺎﺋﻨﺲ ﮐﺎﻟﺞ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻠﮧ ﻟﯿﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﻗﺖ ﭘﯿﺶ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﯽ۔ ﻣﺎﯾﮧ ﻧﺎﺯ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻥ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺒﺪﺍﻟﻘﺪﯾﺮ ﺧﺎﻥ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﮐﺎﻟﺞ ﮐﮯ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻢ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔
ﺍﯾﻒ ﺍﯾﺲ ﺳﯽ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﭨﯿﻮﺷﻦ ﺑﮭﯽ ﭘﮍﮬﺎﺗﺎ ﺭﮨﺎ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻇﺎﮨﺮ ﮨﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﭘﺮ ﺍﺗﻨﺎ ﺑﻮﺟﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮈﺍﻝ ﺳﮑﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻭﺟﮧ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﺭﺱ ﻭ ﺗﺪﺭﯾﺲ ﺍﻭﺭ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﺳﮯ ﺩﻟﭽﺴﭙﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﻟﮕﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﻣﯿﮟ ﭘﮍﮬﺎﺅﮞ ﮔﺎ ﺗﻮ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺳﯿﮑﮭﻮﮞ ﮔﺎ ﺍﻭﺭ ﮨﻮﺍ ﺑﮭﯽ ﯾﻮﮞ ﮨﯽ۔ﺍﯾﻒ ﺍﯾﺲ ﺳﯽ ﮐﺎ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﭼﻠﺘﺎ ﺭﮨﺎ ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﺁﯾﺎ ﺗﻮ ﯾﮩﺎﮞ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﮮ ﻭﻥ ﮔﺮﯾﮉ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯿﺎ۔ﺍﯾﻒ ﺍﯾﺲ ﺳﯽ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺧﯿﺒﺮ ﭘﺨﺘﻮﻧﺨﻮﺍ ﮐﮯ ﺷﮩﺮ ﺻﻮﺍﺑﯽ ﻣﯿﮟ ﻏﻼﻡ ﺍﺳﺤﺎﻕ ﺧﺎﻥ ﺍﻧﺴﭩﯿﭩﻮﭦ ﺁﻑ ﺍﻧﺠﯿﻨﯿﺌﺮﻧﮓ ﺳﺎﺋﻨﺲ ﺍﯾﻨﮉ ﭨﯿﮑﻨﺎﻟﻮﺟﯽ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻠﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻧﭩﺮﯼ ﭨﯿﺴﭧ ﺩﯾﺎ۔ ﺗﯿﺎﺭﯼ ﭘﻮﺭﯼ ﺗﮭﯽ، ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺍﻧﭩﺮﯼ ﭨﯿﺴﭧ ﺷﺎﻧﺪﺍﺭ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺳﮯ ﭘﺎﺱ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ 100 ﻓﯿﺼﺪ ﺍﺳﮑﺎﻟﺮ ﺷﭗ ﻣﻠﯽ۔ﻣﯿﺮﮮ ﺑﮭﺎﺋﯿﻮﮞ ﻧﮯ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﻮ ﻋﻤﻼً ﺧﯿﺮﺑﺎﺩ ﮐﮩﮧ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻭﮦ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﻣﻮﭨﮯ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭ ﮐﺮﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﺟﺲ ﺳﮯ ﻭﮦ ﮨﺮ ﻣﺎﮦ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻌﻘﻮﻝ ﺳﯽ ﺭﻗﻢ ﺑﮭﺞ ﺩﯾﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﯾﮧ ﺭﻗﻢ ﻣﺠﮫ ﺟﯿﺴﮯ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻢ ﺟﺲ ﮐﯽ ﺳﺎﺭﯼ ﺗﻮﺟﮧ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﭘﺮ ﺗﮭﯽ ﮐﺎﻓﯽ ﺗﮭﯽ ﺟﺒﮑﮧ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺗﻮ ﺗﮭﯽ ﮨﯽ ﺍﺳﮑﺎﻟﺮ ﺷﭗ ﭘﺮ۔ﻣﻄﻠﺐ ﯾﮧ ﮐﮧ ﺳﺎﺗﻮﯾﮟ ﮐﻼﺱ ﻣﯿﮟ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﺁﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺟﻮ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ ﻭﮦ ﺍﯾﻒ ﺍﯾﺲ ﺳﯽ ﮐﺮﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻠﮧ ﻟﯿﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺧﺘﻢ ﮨﻮﭼﮑﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯿﻮﮞ ﮐﺎ ﺳﻔﺮ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ﺁﺝ ﺍﮔﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﺳﮯ ﻭﺍﺑﺴﺘﮧ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﺩﺭﺣﻘﯿﻘﺖ ﯾﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﻏﻼﻡ ﺍﺳﺤٰﻖ ﺧﺎﻥ ﺍﻧﺴﭩﯿﻮﭦ ﻣﯿﮟ ﭘﺮﻭﻓﯿﺴﺮ ﻓﻀﻞ ﺍﺣﻤﺪ ﺧﺎﻟﺪ ‏( ﺳﺘﺎﺭﮦ ﺍﻣﺘﯿﺎﺯ ‏) ﮐﯽ ﺗﺮﻏﯿﺐ ﺍﻭﺭ ﺣﻮﺻﻠﮧ ﺍﻓﺰﺍﺋﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﺮﻟﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﺳﮯ ﻭﺍﺑﺴﺘﮧ ﮨﻮﻧﺎ ﮨﮯ۔ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﺳﮯ ﻣﯿﮟ 2009 ﻣﯿﮟ ﻓﺎﺭﻍ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﯽ ﺳﺎﻝ ﺍﯾﻨﮕﺮﻭ ﭘﻮﻟﯿﻤﺮ ﺍﯾﻨﮉ ﮐﻤﯿﮑﻞ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﻣﯿﮟ ﻣﻼﺯﻣﺖ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯼ۔ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﻝ ﺗﮏ ﻣﻼﺯﻣﺖ ﮐﺮﺗﺎ ﺭﮨﺎ۔ ﺍﺱ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﺍﻭﺭ ﺍﻋﻠﯽٰ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﺳﮑﺎﻟﺮ ﺷﭗ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻣﺰ ﺍﻭﺭ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﺭﺍﺑﻄﮯ ﮐﺮﺗﺎ ﺭﮨﺎ، ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﺠﮭﮯ ﺟﺎﭘﺎﻥ، ﮐﻮﺭﯾﺎ، ﮐﯿﻨﯿﮉﺍ، ﺟﺮﻣﻨﯽ، ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ ﺍﻭﺭ ﺍﺑﻮﻇﮩﺒﯽ ﺳﮯ ﺍﺳﮑﺎﻟﺮ ﺷﭗ ﮐﯽ ﺁﻓﺮ ﮨﻮﺋﯽ۔ﺍﯾﻢ ﻓﻞ ﺍﻭﺭ ﺭﯾﺴﺮﭺ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﺁﻓﺮ ﺧﻠﯿﻔﮧ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﺍﺑﻮﻇﮩﺒﯽ سے ملی ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ ﮐﯽ ﺍﯾﻢ ﺁﺋﯽ ﭨﯽ
ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﺗﻌﺎﻭﻥ ﺗﮭﺎ۔ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺑﺎﺕ ﯾﮧ ﮐﮧ ﺭﯾﺴﺮﭺ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺍﻋﺰﺍﺯﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﺍﭼﮭﯽ ﺗﻨﺨﻮﺍﮦ ﺟﺘﻨﺎ ﺗﮭﺎ، ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮﻟﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺳﮑﺎﻟﺮ ﺷﭗ ﮨﯽ ﭘﺮ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﺁﻑ ﭨﻮﮐﯿﻮ ﺳﻤﯿﺖ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﻋﺎﻟﻤﯽ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﯾﺴﺮﭺ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﭘﯽ ﺍﯾﭻ ﮈﯼ ﻣﮑﻤﻞ ﮐﯽ۔ﭘﯽ ﺍﯾﭻ ﮈﯼ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﻣﯿﺮﯼ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﺮ ﮔﺮﺍﻓﯿﻦ ﻧﺎﻡ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﻣﺎﺩﮮ ﭘﺮ ﺗﮭﯽ ﺟﺲ ﮐﻮ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺁﻻﺕ ﺑﻨﺎﺋﮯ۔ ﯾﮧ ﺭﯾﺴﺮﭺ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﺑﯿﻦ ﺍﻻﻗﻮﺍﻣﯽ ﺟﺮﯾﺪﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﺋﻊ ﮨﻮﺋﯽ۔ ﺟﺐ ﻣﯿﺮﯼ ﺭﯾﺴﺮﭺ ﺷﺎﺋﻊ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ، ﺍﺑﻮﻇﮩﺒﯽ، ﺑﺮﻃﺎﻧﯿﮧ ﺍﻭﺭ ﭨﻮﮐﯿﻮ ﺳﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺁﻓﺮﺯ ﺁﺋﯿﮟ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﺭﯾﺴﺮﭺ ﮐﯿﻤﺒﺮﺝ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﻣﺎﯾﮧ ﻧﺎﺯﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﭼﮭﯽ ﻟﮕﯽ ﺟﻨﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﻭﮨﺎﮞ ﺟﺎﺏ ﺁﻓﺮ ﮐﯽ۔ﻭﯾﺴﮯ ﺗﻮ ﺗﻨﺨﻮﺍﮦ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﺍﻋﺎﺕ ﮐﮯ ﺣﺴﺎﺏ ﺳﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﺁﻓﺮ ﺍﺑﻮﻇﮩﺒﯽ ﺳﮯ ﺗﮭﯽ ﻣﮕﺮ ﺍﺏ ﻣﯿﺮﺍ ﻣﻘﺼﺪ ﺗﻨﺨﻮﺍﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﮔﻠﯽ ﻣﻨﺰﻝ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭽﻨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﯿﻤﺒﺮﺝ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﺳﮯ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺁﻓﺮ ﮐﻮ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﯿﺎ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﮐﮯ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺷﺎﯾﺪ ﺩﻧﯿﺎ ﺑﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﺳﮩﻮﻟﺘﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﮐﯿﻤﺒﺮﺝ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﺩﺳﺘﯿﺎﺏ ﮨﮯ ﺟﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﻧﯿﻮﭨﻦ ﺍﻭﺭ ﺳﭩﯿﻔﻦ ﮨﺎﮐﻨﮓ ﺟﯿﺴﮯ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻥ ﺑﮭﯽ ﻣﻨﺴﻠﮏ ﺭﮦ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ۔ﺩﻭ ﺳﺎﻝ ﺗﮏ ﮐﯿﻤﺒﺮﺝ ﻣﯿﮟ ﺭﯾﺴﺮﭺ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻥ ﮐﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﺳﮯ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﺠﮭﮯ ﺳﯿﻨﯿﺌﺮ ﺭﯾﺴﺮﭺ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻥ ﮐﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﺳﮯ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﻣﻮﻗﻊ ﻣﻼ ﮨﮯ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﺘﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮐﯿﻤﺒﺮﺝ ﻣﯿﮟ ﺭﯾﺴﺮﭺ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻥ ﺳﮯ ﺳﻨﯿﺌﺮ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻥ ﮐﺎ ﺩﺭﺟﮧ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺩﻭ ﺳﺎﻝ ﺑﮩﺖ ﮨﯽ ﮐﻢ ﻋﺮﺻﮧ ﮨﮯ، ﺍﻭﺭ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﯽ ﯾﮧ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻭﮨﺎﮞ ﭘﺮ ﺳﺐ ﺳﮯ ﮐﻢ ﻋﻤﺮ ﺳﯿﻨﯿﺌﺮ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻥ ﮨﻮﮞ۔
ﮐﯿﻤﺒﺮﺝ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﯾﻮﺭﭘﯽ ﮐﻤﭙﻨﯿﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺳﭙﯿﺲ ﺍﯾﺠﻨﺴﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﻞ ﮐﺮ ﺳﭙﯿﺲ ﭨﯿﮑﻨﺎﻟﻮﺟﯽ ﺳﮯ ﻣﻨﺴﻠﮏ ﺁﻻﺕ ﺑﻨﺎﺋﮯ۔ ﺍﻥ ﺁﻻﺕ ﮐﻮ ﭨﯿﺴﭧ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯿﻠﯿﮯ ﻭﻗﺘﺎً ﻓﻮﻗﺘﺎً ﺧﻼﺋﯽ ﺟﮩﺎﺯ ﺍﻭﺭ ﻣﺼﻨﻮﻋﯽ ﺳﯿﺎﺭﮮ ﻻﻧﭻ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺮﺍﺑﻮﻟﮏ ﻓﻼﺋﭧ، ﺳﺎﺅﻧﮉﻧﮓ ﺭﺍﮐﭧ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮕﺮ ﺳﭙﯿﺲ ﮐﺮﺍﻓﭧ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﯿﮟ۔ ﮔﺮﺍﻓﯿﻦ ﮐﻮ ﭘﮩﻠﯽ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺧﻼﺀ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻟﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﻣﻮﻗﻊ ﻣﻼ۔
ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺗﺤﻘﯿﻘﺎﺕ ﺑﮭﯽ ﺟﺎﺭﯼ ﮨﯿﮟ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺳﯿﻨﺴﺮﺯ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﺧﻼﺀ ﻣﯿﮟ ﺍﮔﺮ ﺟﺴﻢ ﭘﺮ ﺯﺧﻢ ﻟﮓ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﻮ ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﺑﮭﺮﺍ ﺟﺎﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻡ ﺟﺎﺭﯼ ﮨﮯ۔ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻤﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﺮﻃﺎﻧﯿﮧ ﮐﯽ ﮐﭽﮫ ﺗﻨﻈﯿﻤﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﻞ ﮐﺮ ﺍﯾﮏ ﭘﺮﻭﺟﯿﮑﭧ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺳﯿﭩﻼﺋﭧ ﮐﯽ ﺳﮩﻮﻟﺖ ﻓﺮﺍﮨﻢ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﮔﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻮﻗﻊ ﻣﻼ ﺗﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﺟﺎ ﮐﺮ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﺮ ﻓﺨﺮ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮ ﮔﺎ۔سپوت وطن کی کہانی پڑہ کر ایک طرف تو سر فخر سے بلند ہوا کہ مایوسی والی کوئی بات نہیں اور علامہ اقبال کا وہ پیغام بھی روح پروری کا سامان پیدا کر گیا کہ
نہیں نا امید اقبال اپنی کشت ویراں سے
ذرہ نم ہو تو یہ مٹی بڑی زرخیز ہے ساقی


WhatsApp




متعلقہ خبریں
عمران خان نے انیس سو انتالیس کے میونخ کا حوالہ ... مزید پڑھیں
بلوچستان سے خلائی سائینسدان کا ظہور ... مزید پڑھیں
ٹیم اور کپتان ... مزید پڑھیں
بھٹو کیوں زندہ ہے؟ ... مزید پڑھیں
شاہ سلمان کی آمد ۔۔۔بہار کی آمد ... مزید پڑھیں
افغان باقی، کہسار باقی ... مزید پڑھیں
اقلیتوں کا عالمی دن۔۔۔تجزیہ ... مزید پڑھیں
ارض حرمین پر منڈلاتی گھٹائیں ... مزید پڑھیں
سانپ اور سیڑھی کا کھیل ... مزید پڑھیں
اسرائیلی تاریخ ... مزید پڑھیں
آسیہ" نامی عیسائی عورت اور ہمارا قانون ... مزید پڑھیں
ارضِ حرمین پر منڈلاتی گھٹائیں ... مزید پڑھیں
حکمرانوں کے تابناک اور روشن کردار ... مزید پڑھیں
فاطمہ بنت پاکستان کا مقدمہ ... مزید پڑھیں
یہ رہی تمہاری تلاش ... مزید پڑھیں
اقوام متحدہ کے اجلاس کی روداد ... مزید پڑھیں
متعلقہ خبریں
سیاست کے کھیل کا بارہواں کھلاڑی
عمران خان نے انیس سو انتالیس کے میونخ کا حوالہ کیوں دیا؟
بلوچستان سے خلائی سائینسدان کا ظہور
ٹیم اور کپتان
بھٹو کیوں زندہ ہے؟
شاہ سلمان کی آمد ۔۔۔بہار کی آمد
افغان باقی، کہسار باقی
اقلیتوں کا عالمی دن۔۔۔تجزیہ
ارض حرمین پر منڈلاتی گھٹائیں
سانپ اور سیڑھی کا کھیل

مقبول خبریں
ویڈیو گیلری

آزادی کی تحریکوں کو دبایا تو جا سکتا ہے لیکن ختم نہیں کیا جا سکتا : پاکستانی ہائی کمشنرعبدالباسط

بھارتی اشتعال انگیزی کا ذمہ داری سے جواب دے رہے ہیں ،عاصم باجوہ

پاکستان اورسعودی عرب حقیقی بھائی ہیں،علما اکرام مسلم امت کے اتحاد میں کردار ادا کریں:امام کعبہ

بڈگام میں بھارتی فوج کی فائرنگ، مزید 8 کشمیری شہید، پاکستان کا شدید احتجاج

فرانس میں فائرنگ کرکے 3 افراد کوقتل کرنے والے حملہ آورکی ہلاکت کی تصدیق

سپورٹس
انٹرنیشنل کرکٹ چاہیے بھلے ’بی ٹیم‘ ہی سہی
اکتوبر 1990 میں نیوزی لینڈ کی ٹیم کو پاکستان کے دورے پہ مزید پڑھیں ...
ویب ٹی وی
ٹورازم
پاکستان میں خوبصورت اور دلکش مناظر کی کمی نہیں ہے۔
پاکستان میں خوبصورت اور دلکش مناظر کی کمی نہیں ہے۔ posted by Abdur مزید پڑھیں ...
انٹرٹینمینٹ
وینا اداکاری سے گلوکاری کا سفر
وینا ملک کو زیادہ تر لوگ بطور اداکارہ و ماڈل جانتے ہیں مزید پڑھیں ...
مذہب
بیویاں شوہروں کو طلاق دے سکیں گی والا نکاح نامہ زیرغور نہیں، اسلامی نظریاتی کونسل
اسلام آباد(ویب ڈیسک) اسلامی نظریاتی کونسل کا کہنا ہے کہ مزید پڑھیں ...
بزنس
10 بینکوں کو80 کروڑ روپے سے زائد جرمانہ
10 بینکوں کو80 کروڑ روپے سے زائد جرمانہ، کون کونسے بینک مزید پڑھیں ...