اردو | العربیہ | English



اردو | العربیہ | English

ایران دہشت گرد جماعتوں کی مالی معاونت میں ملوث ہے، شاہ سلمان

طالبان کے مطابق ایران نے افغانستان میں عباسی کی تقریب پر حملے کا حکم دیا


WhatsApp
205



عسکریت پسندوں نے کہا کہ ایران نے انہیں اس تقریب پر حملہ کرنے کا حکم دیا تھا

پاکستان کے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی (دائیں)، افغانستان کے صدر اشرف غنی، ترکمانستان کے صدر گربنگولی بردیمحمدوف اور انڈیا کے امورِ خارجہ کےسیکٹری سری ایم جے اکبر (بائیں) 23 فروری 2018 کو ہرات صوبہ میں ٹاپی گیس پائپ لائن منصوبے کی افتتاحی تقریب کے دوران نظر آ رہے ہیں۔ ہتھیار ڈالنے والے عسکریت پسندوں نے کہا کہ ایران نے انہیں اس تقریب پر حملہ کرنے کا حکم دیا تھا۔ (افغان صدارتی محل)

ایران کی طرف سے فنڈ کردہ اور تربیت شدہ طالبان عسکریت پسندوں کو حکم دیا گیا ہے کہ وہ اس تقریب پر حملہ کریں جس میں پاکستان کے وزیراعظم ایک اہم پائپ لائن منصوبے کا افتتاح کرنے والے ہیں۔ طالبان نے اس حکم کی خلاف ورزی کی اور ہتھیار ڈال دیے۔ہرات، افغانستان -- طالبان عسکریت پسندوں کا ایک گروہ جسے ایران نے سرمایہ اور تربیت فراہم کی تھی، کو ایران کے فوجی افسران نے حکم دیا کہ وہ افغانستان میں اس تقریب پر حملہ کریں جس میں پاکستان کے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے گزشتہ ہفتے شرکت کی تھی۔یہ انکشافات گروہ کی طرف سے اپنے ایرانی سرپرستوں کے حکم کی خلاف ورزی کرنے اور مقامی حکام کے سامنے ہتھیار ڈالنے کے بعد سامنے آئے۔

وزیراعظم عباسی، انڈیا کے امورِ خارجہ کے سیکٹری سری ایم جے اکبر اور ترکمانستان کے صدر گربانگلی بردیمحمدوف افغانستان کے صدر اشرف غنی کے ساتھ ہرات صوبہ میں 23 فروری کو، قدرتی گیس کی ترکمانستان-پاکستان-انڈیا (ٹاپی) پائپ لائن کی افتتاحی تقریب میں شرکت کرنے کے لیے اکٹھے ہوئے۔
ہتھیار ڈالنے والے طالبان کے 10 رکنی گروہ کے کمانڈر، محمد ایوب علی زئی نے کہا کہ ایران نے انہیں تربیت دی اور انہیں ہتھیار فراہم کیے اور گروہ کو حکم دیا کہ وہ تقریب اور پائپ لائن پر حملے کریں۔انہوں نے سلام ٹائمز کو بتایا کہ "ہم جنگی تربیت حاصل کرنے کے لیے سرحد کے پار ایرانی علاقے میں گئے تھے۔ ایران نے ہمیں رقم، ہتھیار اور سامان مہیا کیا تھا تاکہ ہم افغان سیکورٹی فورسز کے ساتھ جنگ کر سکیں۔علی زئی نے کہا کہ "سچائی کا احساس ہونے کے بعد اور ٹاپی منصوبے کے لیے اپنی حمایت کا اظہار کرنے کے لیے ہم نے لڑائی ترک کر دی اور حکومت کے سامنے ہتھیار ڈال دیے۔انہوں نے کہا کہ "جہاں تک طالبان میں شامل ہونے والوں کا تعلق ہے، ایران نے انہیں پانچ، 10 اور 100 کے گروہوں میں ایرانی علاقے میں منتقل کرتا ہے جہاں انہیں تین ماہ کی عسکری تربیت دی جاتی ہے۔

علی زئی نے کہا کہ "ایران میں طالبان کے جو ارکان تربیت حاصل کرتے ہیں وہ ہاسٹلوں میں رہتے ہیں۔ وہ اس ملک میں نہایت آرم سے رہتے ہیں اور آزادی سے ایرانی کے مخلف شہروں میں 15 دنوں تک گھومنے بھی جا سکتے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ "جب ان کی تربیت مکمل ہو جاتی ہے تو ایران انہیں واپس افغانستان بھیج دیتا ہے مگر اس سے پہلے انہیں سیکورٹی فورسز سے لڑنے کے لیے رقم اور فوجی سامان فراہم کیا جاتا ہے۔

ٹاپی پائپ لائن 1,840 کلومیٹر طویل ہے جو ترکمانستان سے انڈیا تک، افغانستان کے علاقے سے گزر کر جائے گی اور توقع ہے کہ یہ ترکمانستان کی دیوہیکل گلخنیش گیس فیلڈ سے 2020 کے آغاز میں قدرتی گیس کو پمپ کرنا شروع کر دے گی۔تجزیہ کاروں نے خدشے کا اظہار کیا ہے کہ ٹاپی ایران کے افغانستان میں دوسرے منصوبوں کے لیے خطرے کا باعث ہے۔

ایرانی تخریب کاری
ہرات میں 606ویں انصار پولیس زون کے انٹیلیجنس ڈائریکٹر محمد نعیم غیور نے سلام ٹائمز کو بتایا کہ "طالبان کے اس گروہ کو (ایران کی طرف سے حکم کردہ) مشن دیا گیا تھا کہ وہ دہشت گردانہ حملوں کا ایک سلسلہ شروع کریں تاکہ ٹاپی منصوبے کی افتتاحی تقریب کے لیے مشکلات پیدا کی جا سکیں"۔
ہرات گورنر کے ایک ترجمان جیلانی فرہاد نے کہا کہ "طالبان کے ان ارکان کو اس سچائی کا احساس ہو گیا کہ: جنگ ان کے لیے اور اس کے ساتھ ہی افغانستان کے لیے نقصان دہ ہے اور یہ ان ممالک کے مفاد میں ہے جو طالبان کی حمایت کرتے ہیں۔ہرات شہر میں ایران کے کونسل جنرل محمود افخمی نے طالبان کے عسکریت پسندوں کی طرف سے کیے جانے والے اس دعوی کی تردید کی ہے۔

فارس نیوز ایجنسی نے افخمی کے بیان سے اقتباس کرتے ہوئے کہا کہ "یہ دعوے بالکل غلط ہیں۔ تاہم، شواہد صاف طور پر، افغانستان کی حکومت اور اس کے مفادات کے خلاف طالبان کے لیے ایران کی مسلسل حمایت کی طرف اشارہ کرتے ہیں۔اس ماہ کے آغاز میں، افغانستان کے نیشنل ڈائریکٹریٹ آف سیکیورٹی (این ڈی ایس) کے سربراہ محمد معصوم سٹنکزئی نے کہا تھا کہ اس بات میں کوئی شبہ نہیں ہے کہ ایران طالبان کو امداد فراہم کر رہا تھا۔سٹنکزئی نے بی بی سی فارسی کے ساتھ 4 فروری کو ایک انٹرویو میں کہا کہ "اس بات کا ثبوت موجود ہے کہ روس اور ایران طالبان کو کچھ امداد فراہم کر رہے ہیں مگر اس بارے میں معلومات کی زیادہ اشاعت نہیں کی گئی ہے۔

افغانستان کے صوبہ فراہ میں بھی حکام نے اس ماہ ایران پر الزام لگایا تھا کہ وہ علاقے میں عسکریت پسندوں کو تربیت اور ساز و سامان مہیا کر رہا ہے۔
فراہ صوبائی کونسل کے ایک رکن داد اللہ قانی نے تو یہاں تک کہا کہ ایران کی جنگی افواج کو افغان سرزمین پر تعینات کیا گیا ہے۔انہوں نے سلام ٹائمز کو بتایا کہ "ایسے ایرانی جرنل تھے جو فراہ صوبہ آئے تاکہ طالبان کو تربیت دے سکیں اور جنگ کی نگرانی اور کنٹرول کر سکیں۔ انہوں نے جنگ تک میں شرکت کی۔یہ دو مثالیں صرف ایسے دو حالیہ شواہد ہیں جو اس بات کو ثابت کرتے ہیں کہ ایران، نہایت سرگرمی سے افغانستان کی سیکورٹی اور خودمختاری کو نقصان پہنچا رہا ہے۔اس گروہ کی طرف سے ہتھیار ڈالنے اور امن کے عمل میں شامل ہونے کا فیصلہ تقریبا اسی وقت آیا ہے جب ملا محمد رسول کے وفادار طالبان کے ایک گروہ نے ٹاپی پائپ لائن کے لیے اپنی حمایت کا عہد کیا۔

طالبان کے ترجمان ہونے کا دعوی کرنے والے قاری محمد یوسف احمدی کی طرف سے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ طالبان "اس منصوبے کو ملک کے اقتصادی بنیادی ڈھانچے کا اہم جزؤ سمجھتے ہیں اور یقین رکھتے ہیں کہ اس کے مناسب نفاذ سے افغانستان کے لوگوں کو فائدہ پہنچے گا۔وائس آف امریکہ کے مطابق، طالبان کے بیان میں کہا گیا ہے کہ "ہم اپنے زیرِ کنٹرول علاقوں میں اس منصوبے کے لیے سیکورٹی فراہم کرنے کے لیے اپنے تعاون کا اعلان کرتے ہیں"۔

ایک اور سابقہ طالبان عسکریت پسند صوفی عظیم جنہوں نے امن کے عمل میں شمولیت اختیار کر لی ہے، سلام ٹائمز کو بتایا کہ "جنگ ایسے ہمسایہ ممالک کو فائدہ پہنچاتی ہے جو افغانستان کی تباہی چاہتے ہیں۔ یہ ہی وہ وجہ تھی جس کی وجہ سے ہم نے جنگ چھوڑ دی اور ہم دوسرے طالبان سے بھی مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ غیر ملکی مفادات کے لیے کام کرنا چھوڑ دیں ۔بشکریہ از سلیمان


WhatsApp




متعلقہ خبریں
بھارتی فوج میں خواتین کی بطور سیکس ورکر بھرتی کا ... مزید پڑھیں
مولانا سمیع الحق کی سیاسی و دینی خدمات پر ایک ... مزید پڑھیں
آسیہ بی بی کی رہائی: اسلامی انصاف کی خوش آئند ... مزید پڑھیں
جدید دور کی سفاک سچائی افغانستان میں خون سستا پانی ... مزید پڑھیں
کشمیر پر قبضے کا نیا پلان ... مزید پڑھیں
عورت کی آزادی : عزت یا ذلت؟ ... مزید پڑھیں
یہ کیسی تبدیلی ہے؟ ... مزید پڑھیں
شاباش چیف جسٹس ... مزید پڑھیں
حِجاب اور عبایا؛ پردہ یا فیشن؟ ... مزید پڑھیں
عورت کی آزادی یا عورت کی تباہی؟ ... مزید پڑھیں
فلسطین کا ایک اور صحافتی سپاہی اس دنیا سے چلا ... مزید پڑھیں
استاد: آجر و اجیر کی زنجیروں میں جکڑا مقدس رشتہ ... مزید پڑھیں
آپریشن دوارکا: پاک بحریہ کی ایک آبدوز نے پوری انڈین ... مزید پڑھیں
بھارت میں بیوی کرائے پر دستیاب ... مزید پڑھیں
یوم فضائیہ؛ پاکستانی شاہینوں کا دن ... مزید پڑھیں
انڈین سپریم کورٹ نے ہم جنس پرستی کو قانونی قرار ... مزید پڑھیں
متعلقہ خبریں
اسرائیل نامنظور کیوں؟
بھارتی فوج میں خواتین کی بطور سیکس ورکر بھرتی کا انکشاف
مولانا سمیع الحق کی سیاسی و دینی خدمات پر ایک نظر
آسیہ بی بی کی رہائی: اسلامی انصاف کی خوش آئند تصویر
جدید دور کی سفاک سچائی افغانستان میں خون سستا پانی مہنگا
کشمیر پر قبضے کا نیا پلان
عورت کی آزادی : عزت یا ذلت؟
یہ کیسی تبدیلی ہے؟
شاباش چیف جسٹس
حِجاب اور عبایا؛ پردہ یا فیشن؟

مقبول خبریں
ویڈیو گیلری

آزادی کی تحریکوں کو دبایا تو جا سکتا ہے لیکن ختم نہیں کیا جا سکتا : پاکستانی ہائی کمشنرعبدالباسط

بھارتی اشتعال انگیزی کا ذمہ داری سے جواب دے رہے ہیں ،عاصم باجوہ

پاکستان اورسعودی عرب حقیقی بھائی ہیں،علما اکرام مسلم امت کے اتحاد میں کردار ادا کریں:امام کعبہ

بڈگام میں بھارتی فوج کی فائرنگ، مزید 8 کشمیری شہید، پاکستان کا شدید احتجاج

فرانس میں تیز رفتار گاڑی فوجیوں پر چڑھ دوڑی، 6 زخمی

سپورٹس
پاکستانی فٹبال ٹیم فلسطین سے میچ کیلئے مقبوضہ بیت المقدس جائے گی
لاہور(ویب ڈیسک) فلسطین سے دوستانہ میچ کھیلنے پاکستانی فٹبال ٹیم مزید پڑھیں ...
ویب ٹی وی
ٹورازم
پاکستان میں خوبصورت اور دلکش مناظر کی کمی نہیں ہے۔
پاکستان میں خوبصورت اور دلکش مناظر کی کمی نہیں ہے۔ posted by Abdur مزید پڑھیں ...
انٹرٹینمینٹ
دپیکا اور رنویر کی شادی : تصاویر جاری
روم (ویب ڈیسک) بالی وڈ جوڑے نے شادی کی تقریبات کے لیے مزید پڑھیں ...
مذہب
بیویاں شوہروں کو طلاق دے سکیں گی والا نکاح نامہ زیرغور نہیں، اسلامی نظریاتی کونسل
اسلام آباد(ویب ڈیسک) اسلامی نظریاتی کونسل کا کہنا ہے کہ مزید پڑھیں ...
بزنس
ایشیائی ترقیاتی بینک کا پاکستان کو 4 کروڑ 90 لاکھ ڈالر دینے کا فیصلہ
اسلام آباد(ویب ڈیسک) ایشیائی ترقیاتی بینک (اے ڈی بی) نے مزید پڑھیں ...