اردو | العربیہ | English



اردو | العربیہ | English

روس کے زیرانتظام کریمیا کے کالج میں بم دھماکے سے 18 افراد ہلاک

آہ!!! ہمارے روّیے ۔۔۔اور پھر یہ الزامات!!!


WhatsApp
343




رات پڑھتے پڑھتے کافی دیر ہو گئی۔ صبح بھی دیر سے جاگا۔ ابھی گھر پر ہی تھا کہ کلاس کا وقت ہو گیا۔ جلدی جلدی ناشتہ کیا اور یونیورسٹی کے لیے نکل پڑا۔ رش کافی تھا کلاس کے لیے بھی دیر ہو رہی تھی۔ مجبوراً اشارہ توڑ دیا، ابھی تھوڑا ہی فاصلہ طے کیا ہو گا کہ’’ اشفاق احمد مرحوم‘‘ کی ایک بات یاد آ گئی ، ’’جو قوم دو منٹ اشارے پر نہیں کھڑی ہو سکتی، وہ اپنے پاؤں پر کیا کھڑی ہو گی‘‘۔
اپنی اس غلطی پر ضمیر نے کافی ملامت کی مگر میں نے بھی پاکستانی ہونے کا ثبوت دیا اور یہ کہہ کر ضمیر کی آواز پر پاؤں رکھ کر دبا دیا کہ مجبوری کا نام شکریہ ہے۔۔۔ لیکن نہ چاہتے ہوئے اشفاق صاحب کی اس بات نے مجھے سوچوں کے گہرے سمندر میں دھکیل دیا اور میں خود ہی سے مکالمہ کرنے لگا۔ یار امین حیدر ویسے اشفاق صاحب کی بات تو بالکل ٹھیک ہے، ہم میں صبر اب نام کو بھی نہیں رہا۔ ہمیں ہر کام میں بہت جلدی ہوتی ہے۔ ہم بطورِ قوم بہت جذباتی ہو چکے ہیں۔ ہمارے زیادہ تر فیصلے وقتی، سطحی اور کم عقلی پر مبنی ہوتے ہیں اور آنے والے وقت میں ہم ان کا خمیازہ بھی بھگتتے ہیں۔
ہم بطور قوم سبھی تو کرپٹ ہیں، ہمارے ایک ریڑھی والے سے لے کر وزیر اعظم تک تقریباً سب ہی کرپٹ ہیں، کوئی کم اور کوئی زیادہ۔ کوئی پیسے کی کرپشن میں ملوث ہے اور کوئی وقت کی۔ ہم خود کو بڑے فخر سے مسلمان بھی کہتے ہیں اور مسلمانوں والا کام بھی کوئی نہیں۔ اسلام نے جتنی جاہلانہ رسومات اور اخلاقی برائیوں کو ختم کرنے کا حکم دیا ہے ہم تقریباً سب پر ہی عمل پیرا ہیں۔
مثال کے طور پر اسلام نے کہا جھوٹ مت بولو اور ہم بڑی بے باکی سے جھوٹ بولتے ہیں، امانت میں خیانت نہ کرو، ہم کرتے ہیں، کسی کا راز نہ فاش کرو، کرتے ہیں، غیبت نہ کرو، کرتے ہیں، سود مت کھاؤ، کھاتے ہیں، تہمت مت لگاؤ، لگاتے ہیں، لڑائی جھگڑے مت کرو، کرتے ہیں، عریانی و بے حیائی نہ پھیلاؤ، پھیلاتے ہیں، کسی کی ٹوہ میں نہ لگے رہو، لگے رہتے ہیں، ناپ تول میں کمی نہ کرو، کرتے ہیں، انصاف کرو، نہیں کرتے، حقوق العباد کا بھرپور خیال رکھو، ہم بالکل نہیں رکھتے۔
ہمارا دین بنیادی طور پر تین چیزوں کا مجموعہ ہے، عقائد، عبادات اور معاملات۔ عقائد کے تو ہم بڑے پکے ہیں، عبادات میں بھی گزارا ہوجاتا ہے مگر جو چیز سب سے اہم اور ضروری ہے اس کو ہم نے بالکل ہی پس پشت ڈال دیا ہوا ہے۔ کیا کبھی ہم میں سے کسی نے یہ سوچنے کی زحمت گوارا کی کہ ان سب چیزوں کا نتیجہ کیا بر آمد ہوا ہے؟
محترم! نتیجہ یہ نکلا ہے کہ آج ہمارے معاشرے میں کوئی کسی پر اعتبار کرنے کو تیار نہیں، ہر اخلاقی برائی کو پروان چڑھا کر ہم نے زوال کو خود دعوت دی ہے۔ چلیں چھوڑیں یہ سب باتیں، مجھے بس اس سوال کا جواب دیجئے کہ ہم میں سے کتنے لوگ ہیں جو بلا ناغہ قرآن پاک کو محض ثواب کی نہیں بلکہ سمجھنے اور اس کی تعلیمات کو اپنی زندگی کا حصہ بنانے کی نیت سے پڑھتے ہیں؟
ہم میں سے کتنے لوگ ہیں جن کو نمازِ جنازہ کا صحیح طریقہ آتا ہو، میت کو غسل دینا آتا ہو، وغیرہ وغیرہ، امید ہے میرے سمیت ہر بندے نے اپنا محاسبہ کر ہی لیا ہو گا۔ اب ذرا آ جائیے موجودہ حالات و واقعات پر، کیا جہاں چار لوگ بیٹھ جاتے ہیں وہ دین پر بحث نہیں کرتے ؟ کیا یہ لمحۂ فکریہ نہیں!!!یہ تو ایسے ہی ہے جیسے کوئی موچی، مستری یا ترکھان سے کہے کہ بھائی چل آپریشن تھیڑ میں اور مریض کے دل کا آپریشن کر۔
دین اسلام نے تو ہمیں دوسروں سے محبت، پیار ، عزت واحترام، عفو درگزر، تحمل، برداشت ، صبر ، شکر اور رواداری کی تلقین کی ہے مگر ماشاء اللہ سے ہم اپنی غلطیوں پر بہترین وکیل اور دوسروں کی غلطیوں پر بہترین جج بنے ہوتے ہیں۔ مجھے یاد ہے وہ غزوہ کہ جس میں ایک نوجوان عیسائی لڑکی اپنے گمشدہ بچے کو بے تابی سے تلاش کر رہی تھی اور اس کا دوپٹہ گر گیا۔ رسول اکرم ﷺ نے اپنے پاس کھڑے ایک صحابی سے کہا کہ یہ لو میری چادر اور اس لڑکی کو دے آؤ تو اس نے کہا: حضورﷺیہ تو عیسائی ہے، آپﷺنے فرمایا: عیسائی کیا انسان نہیں ہوتے؟؟؟
ہم تواپنے ہی کلمہ گو بھائی کو نہ صرف کافر قرار دے رہے ہیں بلکہ اس کوشش میں ہیں کہ کسی بھی طرح اس کو مار ہی دیا جائے۔ او بھائی! تمہارے لیے تمہارا دین اس کے لیے اس کا دین۔ مسلمان نہیں سمجھنا تو نہ سمجھو، کم از کم انسان توسمجھو۔ معذرت چاہتا ہوں ’’مولوی امین حیدر صاحب کی گفتگو سے کسی کی دل آزاری ہوئی ہے تو ۔۔۔کیا کروں، مجبوری ہے میرے پیارے آقاﷺکا حکم ہے،
بلغوا عنی ولو آیۃ
’’مجھ سے ایک آیت بھی سنو تو اس کو آگے پہنچا دو۔‘‘
آخری بات کر کے اپنی گفتگو کو سمیٹنا چاہوں گا کیونکہ آپ کو بھی اس بات کی جلدی ہو گی کہ یہ کالم اب پتا نہیں کب ختم ہو گا۔ لاہور میں حکومت نے جگہ جگہ بڑے بڑے کوڑا دان رکھے ہیں، تا کہ لوگ کچرا ادھر ادھر پھینکنے کی بجائے ان میں ڈال دیا کریں مگر حضرت! نظارہ ذرا ملاحظہ کیجئے ہمارا اور پھر دل کھول کر داد بھی دیجئے کہ عام دنوں کی تو بات ہی کیا کرنی۔ عید الاضحی کے موقع پر بھی عوام نے کوڑا کرکٹ کچرا دانوں کی بجائے ادھر ادھر ہی پھینکا ہے اور پھر مزے کی بات یہ ہے کہ ہر دوسرا بندہ اپنا نزلہ حکومت پر ہی صاف کر رہا ہوتا ہے۔ حکومت یہ، حکومت وہ، حضور آپ بجا فرماتے ہیں مجھے بھی لگتا ہے کہ جو مسجدوں سے جو چپلیں چوری ہوتی ہیں یہ بھی حکومت کی ہی سازش ہے، واٹر کولر پر زنجیر سے بندھا گلاس بھی حکومت کی انہی مذموم حرکتوں کی بھینٹ چڑھ جاتا ہے۔ ویسے کیا ہمارے لیے یہ شرم سے ڈوب کر مرنے کا مقام نہیں ہے۔ کتنا آسان ہے نا ہر بگاڑ چپ کر کے دوسروں کے کھاتے میں ڈال دینا۔
پتا نہیں ہم خود کی اصلاح کا عمل کب شروع کریں گے ، خود کو کس دن انصاف کے کٹہرے میں لائیں گے؟ ایک بات یاد رکھیے کہ آپ میں سے اگر کوئی کسی مسیحا کے انتظار میں ہے تو بھائی معذرت کوئی مسیحا نہیں آنے والا، آپ خود کو بدلیں کسی حد تک دوسروں کے لیے رول ماڈل بنیں جب ہر انسان تبدیلی کا عمل اپنی ذات سے شروع کرے گا تب حالات میں بدلاؤ آ ئے گا۔ میں جانتا ہوں کہ دو چار کے بدلنے سے پورا معاشرہ تو نہیں بدلے گا لیکن اندھوں میں کانا راجہ کے مصداق ہمیں اپنے حصے کا چراغ تو بہر حال جلانا ہی ہو گا ورنہ خدا کا فیصلہ تو پھر آپ سب جانتے ہی ہیں کہ اس نے آج تک اس قوم کی حالت نہیں بدلی جس کو خود اپنی حالت کے بدلنے کا خیال نہ ہو۔ ’’سو جیسے عوام ویسے حکمران‘‘
تو اب پھر چیختے کیوں ہو بھائی، خود ہی تو یہ ڈھول گلے سے باند ھا ہے اب بجاؤ اسے۔ خدا میرے سمیت سب کو اچھے عمل کی توفیق دے اور سب کو خوش رکھے۔ آمین


WhatsApp




متعلقہ خبریں
فاطمہ بنت پاکستان کا مقدمہ ... مزید پڑھیں
یہ رہی تمہاری تلاش ... مزید پڑھیں
اقوام متحدہ کے اجلاس کی روداد ... مزید پڑھیں
القدس اپنے محافظ کی تلاش میں ... مزید پڑھیں
یوم یکجہتی کشمیر کا تاریخی تعاقب و اہمیت ... مزید پڑھیں
بنیادی حقوق کا’’سراب‘‘ ... مزید پڑھیں
ابھی تو پارٹی شروع ہوئی ہے ... مزید پڑھیں
سانپ اور سیڑھی کا کھیل ... مزید پڑھیں
استادِ محترم کو میرا سلام کہنا ... مزید پڑھیں
استعمای عزائم اور دفاع وطن کے تقاضے ... مزید پڑھیں
بچوں کا اغوا،ا عضاء فروشی اور افواہوں کا بازار ... مزید پڑھیں
کشمیر ۔۔۔۔۔آزادی کی صبح جلد طلوع ہونے والی ہے ... مزید پڑھیں
پھر نئے طالبان ... مزید پڑھیں
"سیاسی اصطبل کے گدھے " ... مزید پڑھیں
حقوقِ نسواں کا غلط استعمال ... مزید پڑھیں
’’34 ملکوں کا مذاق‘‘ ... مزید پڑھیں
متعلقہ خبریں
حکمرانوں کے تابناک اور روشن کردار
فاطمہ بنت پاکستان کا مقدمہ
یہ رہی تمہاری تلاش
اقوام متحدہ کے اجلاس کی روداد
القدس اپنے محافظ کی تلاش میں
یوم یکجہتی کشمیر کا تاریخی تعاقب و اہمیت
بنیادی حقوق کا’’سراب‘‘
ابھی تو پارٹی شروع ہوئی ہے
سانپ اور سیڑھی کا کھیل
استادِ محترم کو میرا سلام کہنا

مقبول خبریں
ویڈیو گیلری

آزادی کی تحریکوں کو دبایا تو جا سکتا ہے لیکن ختم نہیں کیا جا سکتا : پاکستانی ہائی کمشنرعبدالباسط

بھارتی اشتعال انگیزی کا ذمہ داری سے جواب دے رہے ہیں ،عاصم باجوہ

پاکستان اورسعودی عرب حقیقی بھائی ہیں،علما اکرام مسلم امت کے اتحاد میں کردار ادا کریں:امام کعبہ

بڈگام میں بھارتی فوج کی فائرنگ، مزید 8 کشمیری شہید، پاکستان کا شدید احتجاج

فرانس میں تیز رفتار گاڑی فوجیوں پر چڑھ دوڑی، 6 زخمی

سپورٹس
یوتھ اولمپکس؛ پاکستانی ریسلر عنایت اللہ نے امریکی حریف کو شکست دے دی
بیونس آئرس(ویب ڈیسک) پاکستانی ریسلر عنایت اللہ نے یوتھ اولمپکس مزید پڑھیں ...
ویب ٹی وی
ٹورازم
پاکستان میں خوبصورت اور دلکش مناظر کی کمی نہیں ہے۔
پاکستان میں خوبصورت اور دلکش مناظر کی کمی نہیں ہے۔ posted by Abdur مزید پڑھیں ...
انٹرٹینمینٹ
علی ظفر معصوم بننے کی کوشش کررہا ہے، میشا شفیع
لاہور(ویب ڈیسک) گلوکارہ میشا شفیع نے علی ظفر پر جنسی مزید پڑھیں ...
مذہب
درود پر تنازع‘ جہلم ،مسجد کے منتظم پر توہینِ مذہب کا مقدمہ
جہلم ( ویب ڈیسک) پاکستان کے صوبۂ پنجاب کے ضلع جہلم کی مزید پڑھیں ...
بزنس
زرمبادلہ کے ذخائر 15 ارب ڈالر کی سطح سے نیچے آگئے
کراچی(ویب ڈیسک) رواں ہفتے زر مبادلہ کے ذخائر میں 10 کروڑ مزید پڑھیں ...