اردو | العربیہ | English



اردو | العربیہ | English

یورپی یونین سے انخلا کیلیے برطانیہ کو 31 جنوری تک مہلت مل گئی

انقلاب مارچ بمقابلہ اقتدار مارچ


WhatsApp
736




زبیر خالق


جان پال ایک چرچ کا پادری تھا۔ اس نے 1338ء میں انگلینڈ میں آنکھ کھولی۔ یہ وہ دور تھا جب برطانیہ میں سیاہ طاعون کی بیماری نے تباہی مچانا شروع کی۔ اس بیماری کے متواتر حملوں سے برطانیہ کی آبادی آدھی رہ گئی، بیماری کے بعد جنگوں کے سال شروع ہو گئے، فرانس کے ساتھ مسلسل جنگوں پر آنے والے بھاری دفاعی اخراجات نے عوام پر اضافی ٹیکس کا ناقابل برداشت بوجھ ڈالنا شروع کر دیا۔ بیماری اور جنگی تباہی نے برطانیہ کی معاشی حالت کو غیر مستحکم کر دیا۔ کھیت سنسان ہو گئے، ان میں کام کرنے کے لیے مزدور کم پڑ گئے، بہت سی زمینیں کاشت ہی نہ کی جا سکیں اور بہت سی تیار فصلوں کی بروقت کٹائی نہ ہوئی۔ اس پر بڑھتے ٹیکس نے مزدوروں کو اجرت میں اضافے کے مطالبے پر مجبور کر دیا۔ حکومت نے جاگیرداروں کا ساتھ دیا اور اجرت میں اضافہ کا مطالبہ مسترد کر دیا۔ غریب عوام میں بے چینی پھیل گئی۔ جان پال نے یہ حالات دیکھے اور اس نے تبدیلی کا نعرہ لگا دیا، اس نے انقلاب کی بات کی۔ اگرچہ اس کا اپنا ماضی بھی بے داغ نہیں تھا، اس پر بائبل کو چرچ کے خلاف استعمال کرنے کا الزام بھی تھا اور وہ متعدد بار حوالات کی ہوا بھی کھا چکا تھا لیکن عوام میں اس کی مقبولیت کم نہ ہوئی۔ اس نے انقلاب کا نعرہ لگایا، اس نے سوال اٹھائے، اس نے پوچھا کہ ایسا کیوں ہے کہ بادشاہ اور جاگیردار عیش و عشرت میں رہیں جبکہ غریب مزدور جو کام کرتے ہیں وہ بھوک سے مریں؟ امراء، مزدوروں کے ساتھ غلاموں جیسا برتاؤ کیوں کریں؟ جان پال کو حکومت نے حکومتی اجازت کے بغیر اور عیسائیت کے خلاف تبلیغ کے جرم میں گرفتار کر لیا لیکن اس کے انقلاب کو دو سیاسی رہنما جیک اسٹرا اور وارٹ ٹائلر آگے لے کر چلے۔ انہوں نے مزدوروں کو اکٹھا کیا اور لندن کی جانب لانگ مارچ کیا وہ 12جون 1381ء کو لندن پہنچے۔ انہوں نے ہنگامہ بھی کیا اور متعدد حکومتی عمارتوں کو نقصان بھی پہنچایا۔ بادشاہ نے ان سے ملاقات کی اور وعدہ کیا کہ ان کے مطالبات تسلیم کیے جائیں گے لیکن واپس جا کر بادشاہ نے کوئی احکامات جاری نہیں کیے اس سے عوام اور مشتعل ہوئی۔ نوجوان بادشاہ نے بہادری دکھائی اور مظاہرین سے ملاقات کی اور انہیں مذاکرات کی دعوت دی اور انہیں لے کر شہر کے باہر آ گیا۔ مذاکرات ناکام ہوئے اور بادشاہ کے حکم پر فوج نے تمام باغیوں کو ہلاک کر دیا۔ لیکن ان باغیوں نے وہاں قربانی دے کر ایک نئے برطانیہ کی بنیاد رکھی۔ انہوں نے لوگوں میں اپنے حق کے لیے کھڑے ہونے کا شعورپیدا کیا، ٹیکس بڑھنے پر اجرت میں اضافے کا جائز مطالبہ منظر عام پر آیا، جیک پال نے بادشاہوں اور جاگیرداروں کی عیش و عشرت پر سوال اٹھائے اور غریبوں کی محرومیوں کی بات کی۔ یہ برطانیہ میں ایک نئے دور کا آغاز تھا۔آپ آج کے پاکستان کا چودہویں صدی کے برطانیہ سے موازنہ کریں تو آپ اپنے ملک کو بہت بہتر پائیں گے۔ آپ کے پاس کھیت کھلیان بھی ہیں اور ان میں کام کرتے صحت مند کسان بھی، آپ پر طاعون جیسی کسی خطرناک بیماری نے حملہ بھی نہیں کیا، آپ کے پاس آزاد میڈیا بھی ہے جو آپ کی حکومت کو ہر عمل پر جوابدہ بناتا ہے۔ آپ کے پاس جیک اسٹرا اور واٹ ٹائلر کی طرح لانگ مارچ کرتے طاہر القادری اور عمران خان بھی ہیں لیکن قادری صاحب اور عمران خان جیک اسٹرا اور واٹ ٹائلر جیسے انقلاب کی بنیاد رکھنے میں ناکام رہے ہیں۔۔۔ کیوں؟؟ کیونکہ یہ انقلاب مارچ نہیں بلکہ اقتدار مارچ کر رہے ہیں کیونکہ یہ مارچ انا کا مارچ ہے۔ اگر یہ لوگ آج اقتدار اور انا سے بالاتر ہو کر انقلاب مارچ کریں اور تمام واپسی کی کشتیاں جلا کر نکلیں تو یقیناًآنے والا پاکستان بھی آج کے برطانیہ سے اس طرح بہتر ہو گا جس طرح آج کا پاکستان چودہویں صدی کے برطانیہ سے بہتر ہے۔
بصورتِ دیگر قادری صاحب کا یہ مارچ بھی وہی انقلاب میں لائے گا جو 2013ء میں انہیں کائرہ صاحب نے دیا تھا اور 2014ء میں اسحاق ڈار صاحب نے۔ آج کل قادری صاحب پھر متحرک ہیں، ڈار صاحب کو تیار رہنا چاہیے ایک اور انقلاب برپا ہونے کو ہے۔ ویسے کبھی میں سوچتا ہوں کہ ڈار صاحب کو وزیر دفاع ہونا چاہیے تھا حکومت کا اب تک اعلیٰ دفاع کیا ہے۔ پھر خیال آتا ہے ارے صاحبا یہ اکیسویں صدی ہے چودہویں نہیں یہاں دفاع خزانے سے ہوتا ہے بندوقوں سے نہیں۔
Timesoflahorenews@gmail.com


WhatsApp




متعلقہ خبریں
عمران خان نے انیس سو انتالیس کے میونخ کا حوالہ ... مزید پڑھیں
بلوچستان سے خلائی سائینسدان کا ظہور ... مزید پڑھیں
ٹیم اور کپتان ... مزید پڑھیں
بھٹو کیوں زندہ ہے؟ ... مزید پڑھیں
شاہ سلمان کی آمد ۔۔۔بہار کی آمد ... مزید پڑھیں
افغان باقی، کہسار باقی ... مزید پڑھیں
اقلیتوں کا عالمی دن۔۔۔تجزیہ ... مزید پڑھیں
ارض حرمین پر منڈلاتی گھٹائیں ... مزید پڑھیں
سانپ اور سیڑھی کا کھیل ... مزید پڑھیں
اسرائیلی تاریخ ... مزید پڑھیں
آسیہ" نامی عیسائی عورت اور ہمارا قانون ... مزید پڑھیں
ارضِ حرمین پر منڈلاتی گھٹائیں ... مزید پڑھیں
حکمرانوں کے تابناک اور روشن کردار ... مزید پڑھیں
فاطمہ بنت پاکستان کا مقدمہ ... مزید پڑھیں
یہ رہی تمہاری تلاش ... مزید پڑھیں
اقوام متحدہ کے اجلاس کی روداد ... مزید پڑھیں
متعلقہ خبریں
سیاست کے کھیل کا بارہواں کھلاڑی
عمران خان نے انیس سو انتالیس کے میونخ کا حوالہ کیوں دیا؟
بلوچستان سے خلائی سائینسدان کا ظہور
ٹیم اور کپتان
بھٹو کیوں زندہ ہے؟
شاہ سلمان کی آمد ۔۔۔بہار کی آمد
افغان باقی، کہسار باقی
اقلیتوں کا عالمی دن۔۔۔تجزیہ
ارض حرمین پر منڈلاتی گھٹائیں
سانپ اور سیڑھی کا کھیل

مقبول خبریں
ویڈیو گیلری

آزادی کی تحریکوں کو دبایا تو جا سکتا ہے لیکن ختم نہیں کیا جا سکتا : پاکستانی ہائی کمشنرعبدالباسط

بھارتی اشتعال انگیزی کا ذمہ داری سے جواب دے رہے ہیں ،عاصم باجوہ

پاکستان اورسعودی عرب حقیقی بھائی ہیں،علما اکرام مسلم امت کے اتحاد میں کردار ادا کریں:امام کعبہ

بڈگام میں بھارتی فوج کی فائرنگ، مزید 8 کشمیری شہید، پاکستان کا شدید احتجاج

فرانس میں فائرنگ کرکے 3 افراد کوقتل کرنے والے حملہ آورکی ہلاکت کی تصدیق

سپورٹس
انٹرنیشنل کرکٹ چاہیے بھلے ’بی ٹیم‘ ہی سہی
اکتوبر 1990 میں نیوزی لینڈ کی ٹیم کو پاکستان کے دورے پہ مزید پڑھیں ...
ویب ٹی وی
ٹورازم
پاکستان میں خوبصورت اور دلکش مناظر کی کمی نہیں ہے۔
پاکستان میں خوبصورت اور دلکش مناظر کی کمی نہیں ہے۔ posted by Abdur مزید پڑھیں ...
انٹرٹینمینٹ
وینا اداکاری سے گلوکاری کا سفر
وینا ملک کو زیادہ تر لوگ بطور اداکارہ و ماڈل جانتے ہیں مزید پڑھیں ...
مذہب
بیویاں شوہروں کو طلاق دے سکیں گی والا نکاح نامہ زیرغور نہیں، اسلامی نظریاتی کونسل
اسلام آباد(ویب ڈیسک) اسلامی نظریاتی کونسل کا کہنا ہے کہ مزید پڑھیں ...
بزنس
10 بینکوں کو80 کروڑ روپے سے زائد جرمانہ
10 بینکوں کو80 کروڑ روپے سے زائد جرمانہ، کون کونسے بینک مزید پڑھیں ...